الجہاد الاکبر

اللہ کا ذکر قتال فی سبیل اللہ سے بھی افضل جہاد ہے

اَلْبَابُ التَّاسِعُ: ذِکْرُ اﷲِ تَعَالٰی اَفْضَلُ مِنَ الْقِتَالِ فِي سَبِيْلِهِ تَعَالٰی

{اﷲ تعالیٰ کا ذِکر قتال فی سبیل اﷲ سے بھی افضل جہاد ہے}

61 /1. عَنْ اَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ رضی الله تعالیٰ عنه: اَنَّ رَسُوْلَ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم سُئِلَ: اَيُّ الْعِبَادِ اَفْضَلُ دَرَجَةً عِنْدَ اﷲِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ؟ قَالَ: اَلذَّاکِرُوْنَ اﷲَ کَثِيْرًا وَالذَّاکِرَاتُ. قُلْتُ: يَا رَسُوْلَ اﷲِ، وَمِنَ الْغَازِي فِي سَبِيْلِ اﷲِ؟ قَالَ: لَو ضَرَبَ بِسَيْفِهِ فِي الْکُفَّارِ وَالْمُشْرِکِيْنَ حَتّٰی يَنْکَسِرَ وَيَخْتَضِبَ دَمًا، لَکَانَ الذَّاکِرُوْنَ اﷲَ اَفْضَلَ مِنْهُ دَرَجَةً.

رَوَهُ اَحْمَدُ وَالتِّرْمِذِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ وَالْبَيْهَقِيُّ مُخْتَصَرًا.

61: أخرجه اَحمد بن حنبل في المسند، 3 /75، الرقم /11738، والترمذي في السنن، کتاب الدعوات، باب منه (5)، 5 /458، الرقم /3376، واَبو يعلی في المسند، 2 /530، الرقم /1401، والبيهقي في شعب الإيمان، 1 /419، الرقم /589، وذکره ابن رجب الحنبلي في جامع العلوم والحکم، 1 /238، 444، والمنذري في الترغيب والترهيب، 2 /254، الرقم /2296.

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ روایت کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پوچھا گیا: (یا رسول اﷲ!) کون سے لوگ قیامت کے دن اﷲ تعالیٰ کے ہاں درجہ میں افضل ہوں گے؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: کثرت سے اﷲ تعالیٰ کا ذکر کرنے والے مرد اور کثرت سے ذِکر اِلٰہی کرنے والی عورتیں۔ میں نے عرض کیا: یا رسول اﷲ! اﷲ تعالیٰ کی راہ میں جہاد کرنے والے سے بھی (زیادہ)؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اگر کوئی شخص اپنی تلوار کافروں اور مشرکوں پر اس قدر چلائے کہ وہ ٹوٹ جائے اور خون آلود ہو جائے پھر بھی اﷲ تعالیٰ کا ذکر کرنے والے لوگ اُس سے ایک درجہ افضل ہیں۔

اسے امام احمد نے، ترمذی نے مذکورہ الفاظ کے ساتھ اور بیہقی نے مختصراً روایت کیا ہے۔

62 /2. عَنْ مُعَاذٍ رضی الله تعالیٰ عنه عَنْ رَسُوْلِ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم: اَنَّ رَجُـلًا سَاَلَهُ، فَقَالَ: اَيُّ الْجِهَادِ اَعْظَمُ اَجْرًا؟ قَالَ: اَکْثَرُهُمْ ِللّٰهِ تَبَارَکَ وَتَعَالٰی ذِکْرًا. قَالَ: فَاَيُّ الصَّائِمِيْنَ اَعْظَمُ اَجْرًا؟ قَالَ: اَکْثَرُهُمْ ِللّٰهِ تَبَارَکَ وَتَعَالٰی ذِکْرًا. ثُمَّ ذَکَرَ لَنَا الصَّلَةَ وَالزَّکَةَ وَالْحَجَّ وَالصَّدَقَةَ، کُلُّ ذَلِکَ رَسُوْلُ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم يَقُوْلُ: اَکْثَرُهُمْ ِﷲِ تَبَارَکَ وَتَعَالٰی ذِکْرًا. فَقَالَ: اَبُوْ بَکْرٍ رضی الله تعالیٰ عنه لِعُمَرَ رضی الله تعالیٰ عنه: يَا اَبَا حَفْصٍ، ذَهَبَ الذَّاکِرُوْنَ بِکُلِّ خَيْرٍ؟ فَقَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم: اَجَلْ.

رَوَهُ اَحْمَدُ وَالطَّبَرَانِيُّ.

62: أخرجه اَحمد بن حنبل في المسند، 3 /438، الرقم /15699، والطبراني في المعجم الکبير، 20 /186، الرقم /407، وذکره المنذري في الترغيب والترهيب، 2 /257، الرقم /2309، والهيثمي في مجمع الزوائد، 1 /74.

حضرت معاذ رضی اللہ تعالیٰ عنہ، حضورنبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ ایک آدمی نے آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم سے سوال کیا: کون سے جہاد کا سب سے زیادہ اجر ہے؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اس بندے کا جہاد جو سب سے زیادہ اﷲ تعالیٰ کا ذکر کرنے والا ہے، اس نے سوال کیا: کس روزہ دار کا اجر سب سے زیادہ ہے؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: ان میں سے سب سے زیادہ اﷲتعالیٰ کا ذکر کرنے والے کا۔ پھر حضورنبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمارے لئے نماز، زکوٰۃ، حج اور صدقہ کا ذکر کیا اور آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: ان عبادات والوں میں اس کا اجر سب سے زیادہ ہو گا جو اﷲ تعالیٰ کا سب سے زیادہ ذکر کرنے والا ہو گا۔ پھر حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے کہا: اے ابوحفص! ذکر کرنے والے تمام بھلائی لے گئے؟ تو حضورنبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: ہاں (یعنی یہ سچ ہے)۔

اسے امام احمد اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

63 /3. وَفِي رِوَيَةِ مُعَاذٍ رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم: مَا عَمِلَ ابْنُ آدَمَ عَمَلًا أَنْجٰی لَهُ مِنَ النَّارِ مِنْ ذِکْرِ اﷲِ. قَالُوْا: يَا رَسُوْلَ اﷲِ، وَلَا الْجِهَادُ فِي سَبِيْلِ اﷲِ؟ قَالَ: وَلَا الْجِهَادُ فِي سَبِيْلِ اﷲِ تَضْرِبُ بِسَيْفِکَ حَتّٰی يَنْقَطِعَ، ثُمَّ تَضْرِبُ بِسَيْفِکَ حَتّٰی يَنْقَطِعَ، ثُمَّ تَضْرِبُ بِهِ حَتّٰی يَنْقَطِعَ.

رَوَهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَعَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ.

63: أخرجه ابن اَبي شيبة في المصنف، 6 /57، الرقم /29452، واَيضًا في 7 /169، الرقم /35046، وعبد بن حميد في المسند، 1 /73، الرقم /127، وابن عبد البر في التمهيد، 6 /57.

ایک روایت میں حضرت معاذ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے بیان کیا ہے کہ رسول اﷲ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: اﷲ تعالیٰ کے ذکر سے زیادہ ابن آدم کا کوئی عمل اسے آگ سے نجات دینے والا نہیں۔ لوگوں نے عرض کیا: یا رسول اﷲ! جہاد فی سبیل اﷲ بھی نہیں؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: نہیں، جہاد فی سبیل اﷲ بھی نہیں، اگرچہ تو اپنی تلوار سے اس حد تک قتال کرے کہ وہ ٹوٹ جائے، تو دوبارہ اپنی تلوار کے ساتھ قتال کرے یہاں تک کہ وہ ٹوٹ جائے، تو اس کے بعد پھراپنی تلوار کے ساتھ قتال کرے یہاں تک کہ وہ ٹوٹ جائے (پھر بھی نہیں، ذِکرِ الٰہی اس سے کہیں زیادہ نفع بخش ہے)۔

اسے امام ابن ابی شیبہ اور عبد بن حمید نے روایت کیا ہے۔

64 /4. عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ عُمَرَ رضی الله تعالیٰ عنهما، عَنِ النَّبِيِّ صلیٰ الله عليه وآله وسلم، اَنَّهُ کَانَ يَقُوْلُ: إِنَّ لِکُلِّ شَيْئٍ صِقَالَةً، وَإِنَّ صِقَالَةَ الْقُلُوبِ ذِکْرُ اﷲِ، وَمَا مِنْ شَيْئٍ اَنْجٰی مِنْ عَذَابِ اﷲِ مِنْ ذِکْرِ اﷲِ. قَالُوْا: وَلَا الْجِهَادُ فِي سَبِيْلِ اﷲِ؟ قَالَ: وَلَوْ اَنْ تَضْرِبَ بِسَيْفِکَ حَتّٰی يَنْقَطِعَ.

رَوَهُ الْبَيْهَقِيُّ وَذَکَرَهُ الْمُنْذِرِيُّ وَاللَّفْظُ لَهُ.

64: أخرجه البيهقي في شعب الإيمان، 1 /396، الرقم /522، وذکره المنذري في الترغيب والترهيب، 2 /254، الرقم /2295، وابن القيم في الوابل الصيب، 1 /60، والمناوي في فيض القدير، 2 /511.

حضرت عبد اﷲ بن عمرو رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم فرمایا کرتے تھے: ہر چیز کو چمکانے والی کوئی نہ کوئی چیز ہوتی ہے اور دلوں کو چمکانے والی شے اﷲ تعالیٰ کا ذکر ہے۔ اﷲ کے ذکر سے بڑھ کر کوئی چیز عذابِ اِلٰہی سے نجات نہیں دلا سکتی۔ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین نے عرض کیا: جہاد فی سبیل اﷲ بھی نہیں؟ آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: (نہیں) اگرچہ تم اپنی تلوار چلاتے رہو یہاں تک کہ وہ ٹوٹ جائے (یعنی ذکر عذابِ اِلٰہی سے جہاد سے بھی بڑھ کر نجات دلانے والا ہے)۔

اِسے امام بیہقی نے روایت کیا ہے۔ جب کہ امام منذری نے بھی بیان کیا ہے اور مذکورہ الفاظ انہی کے ہیں۔

65-70 /5. عَنْ مُعَاذِ بْنِ جَبَلٍ رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اﷲِ صلیٰ الله عليه وآله وسلم: اَکْثِرُوْا ذِکْرَ اﷲِ، فَإِنَّهُ لَيْسَ شَيئٌ اَحَبَّ إِلَی اﷲِ وَلَا اَنْجٰی لِلْعَبْدِ مِنْ حَسَنَةٍ فِي الدُّنْيَا وَالآخِرَةِ مِنْ ذِکْرِ اﷲِ، وَلَوْ اَنَّ النَّاسَ اجْتَمَعُوْا عَلٰی مَا اَمِرُوْا بِهِ مِنْ ذِکْرِ اﷲِ لَمْ نَکُنْ نُجَهِدُ فِي سَبِيْلِ اﷲ.

رَوَهُ الْبَيْهَقِيُّ فِي الشُّعَبِ.

65: أخرجه البيهقي في شعب الإيمان، 1 /395، الرقم /521.

حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اﷲ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: تم کثرت سے ذِکرِ اِلٰہی کیا کرو کیونکہ اﷲ تعالیٰ کی بارگاہ میں کوئی شے اس (یعنی ذِکرِ اِلٰہی) سے زیادہ محبوب و مقبول نہیں ہے اور نہ ہی کوئی شے بندے کو دنیا و آخرت میں اﷲ تعالیٰ کے ذکر سے بڑھ کر نجات دلانے والی ہے۔ اگر سارے لوگ اُس ذِکرِ اِلٰہی کے لیے جمع ہوجائیں جس کا انہیں حکم دیا گیا ہے تو ہم اﷲ تعالیٰ کی راہ میں جہاد کرنے والے نہ ہوتے۔

اسے بیہقی نے ’شعب الایمان‘ میں روایت کیا ہے۔

(66) عَنْ عَبْدِ اﷲِ بْنِ عَمْرٍو رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: ذِکْرُ اﷲِ الْغَدَةَ وَالْعَشِيَّ اَعْظَمُ مِنْ حَطْمِ السُّیُوْفِ فِي سَبِيْلِ اﷲِ وَإِعْطَاءِ الْمَالِ سَحًّا.

رَوَهُ ابْنُ اَبِي شَيْبَةَ وَابْنُ الْمُبَارَکِ.

66: أخرجه ابن اَبي شيبة في المصنف، 6 / 58، الرقم /29456، وأيضًا، 7 /170، الرقم /35047، وابن المبارک في الزهد، 1 /394، الرقم /1116، وابن عبد البر في التمهيد، 6 /59.

حضرت عبد اﷲ بن عمرو رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے، انہوں نے کہا: صبح و شام اﷲ کا ذکر کرنا اﷲ کی راہ میں تلواروں کے توڑنے اور مال کے بے دریغ خرچ کرنے سے زیادہ عظیم ہے۔

اسے امام ابن ابی شیبہ اور ابن مبارک نے روایت کیا ہے۔

(67) عَنْ اَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: لَذِکْرُ اﷲِ فِي الْغَدَةِ وَالْعَشِيِّ خَيْرٌ مِنْ حَطْمِ السُّيُوْفِ فِي سَبِيْلِ اﷲِ.

رَوَهُ الدَّيْلَمِيُّ.

67: أخرجه الديلمی في مسند الفردوس، 3 /454، الرقم /5402.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں: صبح و شام اﷲ کا ذکر کرنا اﷲ کی راہ میں تلواریں توڑنے سے زیادہ بہتر ہے۔

اسے امام دیلمی نے روایت کیا ہے۔

(68) عَنْ مُعَاذِ بْنِ جَبَلٍ رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: لَوْ اَنّ رَجُلَيْنِ يَحْمِلُ اَحَدُهُمَا عَلَی الْجِيَادِ فِي سَبِيلِ اﷲِ وَالْاخَرُ يَذْکُرُ اﷲَ، لَکَانَ اَفْضَلَ اَوْ اَعْظَمَ اَجْرًا الذَّاکِرُ.

رَوَهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ.

68: أخرجه ابن اَبي شيبة في المصنف، 6 /58، الرقم /29462، وأيضًا، 7 /170، الرقم /35056، وذکره السيوطي في الدر المنثور في التفسير بالماَثور، 1 /150.

حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے، وہ فرماتے ہیں: اگر دو شخص ہوں اور ان میں سے ایک شخص گھوڑے پر سوار ہوکر اﷲ کی راہ میں نکلے اور دوسرا اﷲ کا ذکر کرے، تو ذاکر اجر میں دوسرے سے اَفضل یا (فرمایا:) اَعظم ہے۔

اسے امام ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔

(69) عَنْ مُعَاذِ بْنِ جَبَلٍ رضی الله تعالیٰ عنه، قَالَ: مَا عَمِلَ آدَمِيٌّ عَمَلًا اَنْجٰی لَهُ مِنْ عَذَابِ اﷲِ مِنْ ذِکْرِ اﷲِ. قَالُوْا: يَا اَبَا عَبْدِ الرَّحْمٰنِ، وَلَا الْجِهَادُ فِي سَبِيْلِ اﷲِ؟ قَالَ: وَلَا إِلٰی اَنْ يَضْرِبَ بِسَيْفِهِ حَتّٰی يَنْقَطِعَ لِاَنَّ اﷲَ يَقُوْلُ فِي کِتَابِهِ: {وَلَذِکْرُ اﷲِاَکْبَرُ} [العنکبوت، 29 /45].

رَوَهُ ابْنُ أَبِي عَاصِمٍ وَابْنُ عَبْدِ الْبَرِّ.

69: أخرجه ابن اَبي عاصم في الزهد، 1 /184، واَبونعيم في حلية الأولياء وطبقات الاَصفياء، 1 /235، وابن عبد البر في التمهيد، 6 /57، وذکره الذهبي في سير اَعلام النبلاء، 1 /455.

حضرت معاذ بن جبل رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ آدمی کا کوئی عمل اﷲ تعالیٰ کے ذکر سے زیادہ اﷲ تعالیٰ کے عذاب سے نجات دینے والا نہیں۔ لوگوں نے کہا: اے ابو عبد الرحمن! کیا اﷲ تعالیٰ کی راہ میں جہاد بھی نہیں؟ انہوں نے فرمایا: نہیں، اگرچہ وہ اپنی تلوار اس قدر چلائے کہ وہ ٹوٹ جائے؛ کیونکہ اﷲ تعالیٰ اپنی کتاب میں ارشاد فرماتا ہے: {وَلَذِکْرُ اﷲِ اَکْبَرُ} ’اور واقعی اﷲ کا ذکر سب سے بڑا ہے‘۔

اسے امام ابن ابی عاصم اور ابن عبد البر نے روایت کیا ہے۔

(70) قَالَ عَبْدُ اﷲِ: لَوْ اَنَّ رَجُلًا بَاتَ يَحْمِلُ عَلَی الْجِيَادِ فِي سَبِيْلِ اﷲِ وَبَاتَ رَجُلٌ يَتْلُوْ کِتَابَ اﷲِ لَکَانَ ذَاکِرُ اﷲِ اَفْضَلَهُمَا.

رَوَهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ.

70: أخرجه ابن اَبي شيبة في المصنف، 6 /134، الرقم /30089.

حضرت عبد اﷲ نے فرمایا: اگر (دو اَشخاص میں سے) ایک شخص اﷲ کی راہ میں گھوڑے پر رات گزارتا ہے، اور دوسرا کتابُ اﷲ کی تلاوت کرتا ہے تو دونوں میں سے اﷲ کا ذکر (یعنی قرآن مجید کی تلاوت) کرنے والا افضل ہوگا۔

اسے امام ابن ابی شیبہ نے روایت کیا ہے۔

Copyrights © 2020 Minhaj-ul-Quran International. All rights reserved